کارسازوں کے ساتھ کھان پان
Volume 1 | Issue 9 [January 2022]

کارسازوں کے ساتھ کھان پان <br> Volume 1 | Issue 9 [January 2022]

کارسازوں کے ساتھ کھان پان

-جیا جیٹلی

Volume 1 | Issue 9 [January 2022]

اردو ترجمہ- عدنان کفیل درویشؔ

طویل عرصے سے بھلا دئے گئے واقعات سے کھانے کو جوڑنے والا ادب کا سبسے مشہور کام یقیناً مارسیل پراؤسٹ کی فرانسیسی کلاسک کا درجہ رکھنے والی سات جلدوں میں تحریر کردہ کتاب “ریممبرینس آف تھنگس پاسٹ” ہی ہوگی جسے انیسویں صدی کے آخر اور بیسویں صدی کی ابتدا میں لکھا گیا۔ ایک موقع پر، چارلس سوان، مرکزی کردار، لیموں کے پھولوں کی چائے میں ڈوبی ہوئی میڈلین نامی ایک نازک لمبے چوڑے چائے کیک کے ایک ٹکڑے کو منہ میں رکھتا ہے، جس کے ذائقے اچانک اس کے بچپن کی یادوں کا ایک خزانہ کھول دیتے ہیں۔ اس کے بعد ایک گہری فلسفیانہ پڑتال ہوتی ہے کہ کیسے بہت پرانی ذخیرہ شدہ یادیں جاری ہوتی ہیں۔ کم ہرصی کے ساتھ، جب کہ کبھی بھی خود کو کھانے کا بہت شوقین نہیں سمجھا، لیکن میرے سفر اسلئے بھی یادگار رہے کیوں کی وو عجیب طور پر کھانے کی یادوں کو واپس لاتے ہیں جو سفر کا ایک روحانی حصہ بن گئے تھے۔ ہمارے ذہنوں میں کھانا کبھی بھی سبسےاوپر نہیں رہا، لیکن پیچھے مڑ کر دیکھا جائے تو ایسا لگتا ہے کہ کھانے، لوگوں اور اس تجربے کی انفرادیت کو یاد کیے بغیر تجربہ کبھی مکمل نہیں ہوتا۔

گجرات میں، جہاں میرا دستکاری کا سفر 1978 میں شروع ہوا، شاہراہوں پر بے تکلّف سادے ڈھابے ہمیشہ صاف ستھرے ، محفوظ اور سستے تھے۔ بڑی بڑی روٹیاں، دال کا ایک پیالہ، سفید مکھن کا ایک ناگزیر فراخ گولا، تلی ہوئی اور نمکین ہری مرچیں اور چھاس کا ایک سادہ بھرپور کھانا کبھی باسی یا دوبارہ گرم نہیں ہوتا تھا۔ کچھ ایک بہت بڑا بنجر علاقہ تھا جس کے راستوں میں بہت دھول بھری مٹی اور کانٹے دار جھاڑیاں تھیں۔ ہم نے کئی سالوں تک بہت سے دیہاتی علاقوں کا دورہ کیا لیکن ایک ہمارا بیس کیمپ تھا – ہوڈکا، بنّی کے راستے کے مرکز میں۔ گاؤں پہنچ کر ہم باریک کڑھائی والی لحافیں، تورانیں، چکلے، کنجریاں اور گھاگھروں کا جائزہ لینے کے لیے فرش پر بیٹھ جاتے۔ وہ سب خواتین اور نوجوان لڑکیوں نے اپنے جہیز کے حصّے کے طور پر بنائے تھے۔ ہم نے رنگوں، ترتیبوں، اور ان کی مخصوص کمیونٹی کے روایتی نقشوں کا جائزہ لیا اس سے پہلے کہ ہم انھیں یہ مشورے دیتے کہ کیسے وہ اپنے کام کو شہری بازاروں کے مطابق اور بڑھا سکتی ہیں وو بھی اپنی منفرد شناخت کے ساتھ سمجھوتہ کیے بغیر ہی جو کہ ان کے سلائیوں اور رنگوں سے ظاہر ہوتا ہے۔ وقت بے دھیان گزرتا یہاں تک کہ اچانک کڑھائی کی ہوئی چیزوں کا ٹیلہ ایک طرف اچھال دیا جاتا اور اِسٹیل کی طشتریاں سامنے لگا دی جاتیں۔ باجرے کے تین موٹے روٹلے، ہری مرچیں اور پیاز ایک ساتھ پکایا جاتا جو کہ واحد دستیاب سبزی ہوتی، مکھن کا ناگزیر گولا، اور چھاس کی لامتناہی واڈکیاں۔ سن اسٹروک سے بچنے کے لیے موٹے کٹے کچّے پیاز کا ڈھیر بھی ہوتا۔

دودھ سے متعلق مصنوعات کے ساتھ سخاوت اس لیے تھی کہ وہ چرواہوں کے خاندان تھے۔ ننگے پاؤں خواتین خاموشی سے دھوپ میں سوکھے ہوئے کیچڑ کے فرش پر اس سے کہیں زیادہ روٹلوں پر دوڑ لگاتیں جن کی طرف ہم دیکھنا بھی برداشت نہیں کر سکتے تھے۔ آج، ہوڈکا گاؤں روایتی موسیقی، مہمانوں کی جھونپڑیوں، مقامی لوک گلوکاروں کی شام کی تفریح ​​اور ان ہی شاندار روٹلوں، دال، مکھن کے گولے اور چاس جو ہم چالیس سال پہلے کھاتے تھے، کے ساتھ ایک وسیع و عریض سیاحتی مقام بن گیا ہے۔

کٙچھ میں ایک اور پڑاؤ دھمڈکا، اور بعد میں بُھج کے قریب اجرک پور، مشہور کھتری خاندان کے ساتھ کام کرنے کے لیے ہوگا جس کی شروعات محمد بھائی صدیق بھائی، والد، اور ان کے تین بیٹوں، رزاق بھائی، اسماعیل بھائی اور جبار بھائی سے ہوئی تھی۔ 90 کی دہائی کے اوائل سے لے کر آج تک، جب تینوں بیٹوں کے لاتعداد بچّے اور پوتے ہیں، میں توقع کرتی وہی بھرا ہوا لال مرچ کا اچار، لذیذ مٹن سالن جس میں خوب سارا لہسن ہوتا اور ساتھ میں ایک خاص طرح کی دال اور دوسرے مسالے بھی ہوتے جن کی بہترین خوشبو دروازے تک پہنچتی۔

ابتدائی دنوں میں سوراشٹرا بھی انتہائی خشک سالی کا شکار تھا، جہاں سال بہ سال مانسون بیکار چلے جاتے تھے۔ اپنے چھوٹے بچّوں کے ساتھ نان اے سی وین میں 48-50 ڈگری درجہ حرارت میں سفر کرنا ایک ایڈونچر ہی تھا۔ میں انہیں دکھانا چاہتی تھی کہ جب میں گھر سے دور ہوتی ہوں تو میں کیا کرتی ہوں۔ ہمیں ٹھنڈک محسوس کرنے کے لیے کچھ کولا کی بوتلوں کی تلاش میں ایک بار ایک انتہائی ناگوار بوتل والا مشروب ملا جس کا نام سوسیو تھا۔ آخر کار، میرے بچوں نے اس دن گرمی کو شکست دینے کے لیے 17 گلاس چاس گٹک ڈالی۔

مجھے خواتین کے قومی کمیشن نے اُتّر پردیش کے ضلع مرزا پور کے بھدوہی میں قالین اور دری بُنائی کے پھیلے ہوئے دیہاتی علاقوں میں بھیج دیا تاکہ قالین کی صنعت میں ملازمت کرنے والی خواتین کے حالات کا جائزہ لیا جا سکے۔ خواتین کو ان کے عمدہ کام کے لیے بھرتی کیا گیا تھا لیکن کام اور اجرت کے حالات ابتر تھے۔ ملحقہ دیہات کی 700 خواتین کا اجتماع سارا دن اپنے مسائل کے بارے میں بتاتا ہے اور ہمارے ساتھ آنے والے عہدیداروں کو عرضیاں سونپتا ہے۔ میں نے ان کے چھوٹے چھوٹے کام کرنے کی جگہوں اور ان کے گھروں میں قابل رحم حالات کا دورہ کیا۔ جب میں اسٹیشن کے لیے روانہ ہو رہی تھی، ان میں سے بہت سے لوگ آئے اور مجھے کچھ خوبصورت ٹوکریاں دیں جو انھوں نے اپنے رسمی مواقع کے لیے بُنی تھیں، ان کے مسائل کے بارے میں سب سے پہلے پوچھنے کے لیے میرا شکریہ ادا کیا۔
میں حیران تھی کہ میں ان کی آمدنی بڑھانے یا کوئی کام دلوانے میں ان کی مدد کیوں نہ کر سکی۔

وقت گزر گیا اور ایک بینک جس نے ایک تنظیم کے طور پر ہماری دستکاری ہاٹ سمیتی سے رابطہ کیا جو کچھ دیہی ترقیاتی کاموں کو نافذ کر سکتی تھی، ہماری پسند کا ایک پروجیکٹ چلانے کے لیے ایک چھوٹی سی رقم کی پیشکش کی۔2 لاکھ روپے کے ساتھ ہاتھ میں سری لنکا کی کچھ خوبصورت گھاس کی ٹوکریاں، میں نے پیغام بھیجا کہ میں ان دیہاتوں میں جاؤں گی جہاں خواتین اپنی ٹوکریاں لے آکر مجھے اپنی بہترین صلاحیتیں دکھا سکتی ہیں۔ ہم گرمی کے موسم کی تپش میں ان کے گھروں، کھلی جگہوں اور آم کے باغوں کے ہلکے سایہ میں بیٹھ گئے۔ وے کچھ کچے آموں کو توڑ لاۓ اور کسی کو چار روپے مل گئے کہ بازار سے ایک سستی چھری خرید کر چھوٹے چھوٹے ٹکڑوں میں کاٹ لے۔ ان میں سے ایک اخبار میں لپٹا نمک اور لال مرچ پاؤڈر لایا۔ یہ سب مل کر ہمارا کھٹّا کھٹّا لیکن دن بھر کی تازگی کا وقفہ بن گیا۔ ان دھنوادھار میٹنگوں میں کئے گئے کام یہ بتانے پر مشتمل تھے کہ وہ کس طرح ہر جگہ منڈیوں میں بیچنے کے لیے ٹوکریاں بنا کر اپنی زندگیوں کی قدر کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کبھی سوچا بھی نہیں تھا کہ ان کی بنائی کی مہارت کو مالیاتی منافع میں تبدیل کرنا ممکن ہے۔ بینک کی کفالت نے ہمیں ڈیزائنرز کی رہنمائی میں ورکشاپ منعقد کرنے اور بعد میں دہلی میں نمائش کے انعقاد کے لیے کافی صنعت کی اجازت دی۔ ان کے مرد لوگ انہیں اپنی سائیکلوں پر ورکشاپس میں شرکت کے لیے لاتے اور درختوں کے نیچے سوتے جب کہ خواتین نے اپنے پہلے سے ہنر مند کام پر نئے ڈیزائن اور رنگوں کا اطلاق کرنا سیکھا۔ مردوں کا ساتھ صرف اس لیے تھا کہ خواتین کو وظیفہ مل رہا تھا۔ اور خواتین کو آئس کریم کھانے کے وقفے بہت پسند تھے!!

مدھیہ پردیش نے کھانے سے متعلق یادگار تجربات پیش کیے۔ جب بھی سری لنکا کے مشہور اینا ڈا سلوا کے ساتھ باٹک ڈیزائن کی ترقی کے پروجیکٹ پر کام کرنے کے لیے اُجین کے دورے کا تذکرہ دفتر میں کیا جاتا ، میری نوجوان ساتھی چارو ورما کا قصبے کے مضافات کی کھلی فضا میں کھانے کے جوائنٹ میں میری لی گئی ایک تصویر کو ایک بار پھر ہنسنے کے لیے دکھایا جاتا۔ کاریگروں کے مقامی گروپ نے ایک چھوٹی سی ندی کے کنارے ایک سادہ کھلی ہوا والے ریستوراں میں مجھے کچھ خاص کھانوں کے ساتھ کھانا کھلا کر ہماری کامیاب ورکشاپ کے اختتام کا جشن منانے کی سفارش کی۔ بظاہر، یہ جوائنٹ اپنی دال باٹی چرما کے لیے مشہور ہے، ایک انتہائی سخت چیز، کرکٹ کی گیند کے سائز کی، جو آٹا، سوجی، مسالے اور بیسن کے گہرے تلے ہوئے مکسچر پر مشتمل ہے۔ اسے پاؤڈر میں ریزہ ریزہ کرنا ہوتا ہے جس پر دال ڈالی جائے اور ملا دی جائے۔ میں نے بے بسی سے اس چٹان جیسے بڑے گولے کو دیکھا جس نے کھانے کے ٹکڑوں میں ٹوٹنے سے انکار کر دیا تھا جبکہ کاریگر مسکراتے ہوئے میری حالت زار دیکھ رہے تھے۔ اچانک، مالک-مینیجر-کک جھپٹ پڑے۔ اس نے سخت گیند کو اپنے بڑے چکنائی والے ہاتھوں میں پکڑا، اس پر دال ڈالی، مکسچر کو کچل کر ملا دیا اور میش کیا جب تک کہ اسے اطمینان نا حاصل ہوا اور سب کچھ مل نہ گیا اس بیچ میں مسکراتے رہنے کی کوشش میں خوف زدہ نظروں سے دیکھتی رہی۔ چارو نے اسے کیمرے میں قید کر لیا جب سب نے خوشی کا اظہار کیا۔

ریاست کا ایک اور دورہ دیگر وجوہات کی بنا پر ناقابل فراموش تھا۔ ہم چندیری کا دورہ کر رہے تھے، ایک چھوٹا سا شہر جس میں شاندار یادگاریں ہیں اور جہاں بہت سے ہینڈلوم کے کاریگر ہیں جو شاندار رنگوں کی عمدہ ساڑھیاں بناتے ہیں۔ ظہیر ٹنٹونی، ایک بنکر، ہمارے میزبان تھے۔ جیسا کہ ہم نے بہت سے اداروں کا دورہ کیا اور ان کے اہل خانہ سے ملاقات کی، یہ ان کے لیے فرض اور فخر کی بات تھی کہ وہ ہمیں کھانے کے لیے کچھ پیش کریں۔ ہم نے چاول اور مٹن کے سالن کا کھانا ترک کر دیا، صرف پھل مانگے۔ جب ہم ظہیر کے گھر اور بعد میں مدثر کے گھر بیٹھے تو ان کے گھر والوں نے ہم میں سے ہر ایک کے لیے اور اپنے لیے پیالے رکھے تھے۔ گرمی کی شدید تپش میں آم، تربوز، کیلے اور انگور سب سے بہترین چیزیں تھیں، لیکن آخر میں سب کے خالی پیالوں کا مجموعہ اس قدر زبردست تھا کہ میں تصویر کھنچوا کر سب کا دل بہلانے سے خود کو روک نہیں سکی جیسے میں نے ہی یہ سب کچھ کھا لیا ہو۔

ہمارے آخری دن ظہیر نے ہمیں رام نگر جھیل کے قریب پرانے قلعے کا دورہ کرنے کا مشورہ دیا۔ انہوں نے ہم سب کے لیے ایک شاندار لنچ میں دال اور روٹیاں پکانے کا فیصلہ کیا تھا۔ ہر ایک نے اس حقیقت کی تصدیق کی کہ وہ اتنا ہی اچھا باورچی تھا جتنا کہ وہ بُنکر تھا۔ بالکل، جب ہم خوبصورت کھنڈرات اور پرسکون جھیل کے کنارے پہنچے تو ظہیر اور اس کی ٹیم آٹا گوندھنے اور دال کے ایک بڑے برتن کو اس طرح ہلانے میں مصروف تھے جیسے وہ کسی شادی میں پیشہ ور باورچی ہوں۔ ہم نے اخبارات اور کاغذ کی پلیٹوں کی لمبائی رکھی اور ایک ساتھ مل کر مزے کا کھانا کھایا۔ خوشی اور جوش کے ساتھ پکی ہوئی سادہ ذائقہ دار دال روٹی کسی بھی دن کے فائیو اسٹار کھانے سے زیادہ قیمتی ہے۔

میں نے اوڈیشہ کے کاریگروں کو عام طور پر نرم بولنے والا پایا ہے۔ رگھوراج پور کے اپندر سوین، یونیسکو کی طرف سے نامزد فنکاروں کا گاؤں خاص طور پر لہسن یا پیاز نہ کھانے والا ہے۔ جب ہم نے اسے دو ہفتوں کے لیے اپنی ایک نمائش کے لیے سنگاپور بھیجا، تو وہ اسے جاری رکھنے کے لیے گھر کے بنے ہوئے چُوڑے کا ذخیرہ لے گیا۔ ہم نے اپنے میزبانوں سے اس کے کمرے میں ایک چھوٹا پریشر ککر، چاول کا ککر اور چولہا فراہم کرنے کو کہا۔ ہمیشہ شکر گزار، وہ کبھی بھی دہلی میں ہمارے دفتر میں دو بڑے کنٹینرز کے بغیر نہیں جاتا ہے جو آپ کو گھر کے بنے ہوئے سب سے لذیذ ترین چِوڑے کے کبھی نہیں ملے گا۔ ہم ریسیپی شیئر نہیں کر رہے کیونکہ وہ ہمیں کبھی نہیں بتاتا۔ وہ شرماتے ہوئے بہانے بناتا ہے، ہمیں یقین دلاتا ہے کہ وہ ہمیں اچھی طرح سے فراہم کرے گا۔ دوسری طرف ربندر بہر بے باک، باصلاحیت اور پرجوش ہے۔ وہ ہر روز پوری کے مندر جاتا ہے اور مندر سے پرشاد کے کھجور کے پتوں کے ڈبّے کے بغیر دہلی کبھی نہیں آتا، اور بلند آواز میں ’’جئے جگن ناتھ!‘‘ کے ساتھ ہمارا استقبال کرتا ہے۔ جب میں اپنی فیملی کے ساتھ اس کے گھر گئی تو اس نے ہمیں کیلے کا ایک گچھا کھلایا اور اس کی شادی کی ویڈیو اس کے چھوٹے سے کمرے میں ایک بڑی اسکرین پر دیکھی۔ مہمان نوازی واقعی بہت سی شکلیں لیتی ہے۔

سابقہ ​​جموں و کشمیر کی حکومت کے پاس درحقیقت ‘توازہ’ نامی ایک محکمہ ہے، جس کا مطلب ہے ‘مہمان نوازی’، جو اہم ریاستی مہمانوں کو رسمی مواقع پر دیکھ بھال کرتا ہے۔ 2000 کے اوائل میں عسکریت پسندی کی پہلی شدید لہر ختم ہونے کے فوراً بعد، میں ایک خاص کاریگر کے گھر کی طرف جانے والی کچھ گلیوں میں چل رہی تھی۔ یہ علاقہ عسکریت پسندوں اور خونریزی سے بھرا ہوا تھا، پھر بھی جب میں نے ایک دروازے پر گھر کے لیے پوچھا تو مالک نے مجھ سے چائے کے ایک پیالے کے لئے اندر بلا لیا اور ہمارے دوست کو بھی اپنے گھر بلانے کی پیشکش کی۔ جب ہم سے برسوں سے جڑے دستکاروں کا گروپ یہ سنتا ہے کہ ہم سری نگر کا دورہ کر رہے ہیں، تو اس بات پر جھگڑا ہو جاتا ہے کہ کون کون لوگ کھانے کی میزبانی کرینگے ، یہاں تک کہ لنچ، زبردست چائے اور رات کے کھانے سے لے کر ہمارے ہر کھانے کے لیے بکنگ ہو جاتی ہے۔ خواہ یہ کھانا ہو یا صرف ایک چھوٹا ناشتہ، آپ یقین کر سکتے ہیں کہ نمکین اور میٹھے بسکٹ، کیک، روسٹ چکن یا پسلیاں، اخروٹ اور سیب ہوں گے۔ پورے خاندان کے ساتھ فرش پر بیٹھ کر ایک حقیقی کھانے کا مطلب ہے چاولوں کا ایک بڑا ڈھیر، کباب، تبک ماز ​​(مزیدار میمنے کی پسلیاں)، روغن جوش، رستہ، گشتبہ یا یخنی، چکن کری، حق ساگ اور ایک مسند جب یہ سب ختم ہو جائے تو اس کے اپر ٹیک لگانے کے لئے۔

حکیم غلام محمد، جو پیشے سے ایک روایتی حکیم اور پپئے ماشے آرٹسٹ کے طور پر جانے جاتے ہیں، نہ صرف ہمیں سری نگر میں اپنے گھر پر کھانا کھلاتے تھے جہاں وہ اپنے درخت سے جنگلی سیب پیک کرتے تھے، اور اپنے باغ سے شہد کی بوتلیں ہمارے گھر لے جانے کے لیے دیتے تھے، بلکہ جب وو سردیوں میں ہمارے دفتر میں ایک پروجیکٹ پر کام کرنے اور نظام الدین میں اپنے بیٹے کے ساتھ رہنے کے لیے ایک طویل وقفے کے لیے دہلی آئے ،تو وہ ساگ اور جنگلی سیب کے ساتھ لذیذ گوشت پکاتے اور میرے احتجاج کے باوجود میرے گھر لے آتے۔ وہ خاص ساگ چن سکتے تھے – جو سردیوں کے لیے موزوں ہوتے ہیں – جو بھوگل کے علاقے میں بڑی تعداد میں رہنے والے کشمیریوں کو بھی پسند آتے ہیں۔

ندوستان کے شمال مشرق کے دورے مختلف ذائقے اور زندگی گزارنے کے طریقے سے روشناس کراتے ہیں۔ میں انکت، ایک نوجوان ساتھی، اور ایک باصلاحیت نوجوان فوٹوگرافر، سوبینوئے کے ساتھ گُوگل آرٹس اینڈ کلچر سے متعلق تحقیق اور دستاویزی کے لیے سفر کر رہی تھی۔ ہم ایک سے زیادہ ٹوکری بُننے والے گھروں اور گاؤوں میں جا چکے تھے ، اور اب تریپورہ جا رہے تھے، لیکن رادھا بنود کوئجم، ایک دوست اور منی پور کے سابق وزیر اعلیٰ نے ہمارے لیے فیملی ڈنر کی میزبانی کرنے کا فیصلہ کیا۔ جو کوئی بھی منی پور میں ایک رسمی دعوت میں گیا ہے وہ روایتی باورچیوں کے لباس، لیٹ آؤٹ اور کھانا پیش کرنے کے طریقے سے مکمل فضل اور دلکشی کو سمجھے گا۔ وہ سفید پگڑیوں میں ملبوس ہوتے ہیں جو بڑی خوب صورتی کے ساتھ بندھے ہوتے ہیں، ساتھ ہی بے داغ سفید کرتے اور گھومتے ہوئے منی پوری ڈھول بجانے والوں کے جیسی دھوتیوں کے ساتھ۔کٹوریاں کیلے کے پتوں سے بنائی جاتی ہیں جو ہر مہمان کے لیے ایک بڑے کیلے کے پتّے کے کنارے پر رکھی جاتی ہیں۔ باہر آنے والی ہر ڈش یا تو دلکش ساگ ہوتی ہے یا آپ کی صحت کے لیے بہت اچھی ڈش۔ دال ہلکی اور مرچیں تیز ہوتی ہیں۔ یہ کسی کے اس یقین کی تصدیق کرتا ہے کہ مخصوص کھانوں کو مخصوص طریقوں سے پکانا اور پیش کرنا ہندوستان میں مقامی ثقافتوں کا بہت زیادہ حصّہ ہے اور یہ ہمیشہ کمیونٹی کے بہترین سلوک کو ظاہر کرنے کا ایک غیر شعوری طریقہ بھی ہے۔

ور آخر میں، اروناچل پردیش کے مغربی کامینگ ضلع کے ایک چھوٹے سے گاؤں تھیمبنگ کا دورہ ہے، جو 2169 میٹر کی بلندی پر، سبزہ زار پہاڑیوں کے درمیان ہے، جس کے نیچے ایک گھاٹی سے دریائے دیرانگ بہتا ہے۔ تھیمبنگ کا مرکز ژونگ ہے، جو 1100 عیسوی میں پتھر اور لکڑی سے بنایا گیا ایک شاندار قلعہ ہے۔ یونیسکو کی طرف سے ایک تاریخی گاؤں کے طور پر تسلیم شدہ، مونپاز کے نام سے جانے جانےوالے باشندوں نے صدیوں سے تبتیوں کے ساتھ یاک اون، مکھن، پنیر اور گھی کی تجارت کی ہے۔ وہ کمیونٹی کی زندگی کو اہمیت دیتے ہیں، کئی قسم کی نامیاتی سبزیوں کی کاشت کرتے ہیں، آرکڈ اگاتے ہیں، سیاحوں کے لیے ایک ہوم اسٹے چلاتے ہیں، اور ہینڈلوم کی بنائی کی مشق کرتے ہیں جسے میں اپنے گُوگل آرٹس اینڈ کلچر پروجیکٹ (https://artsandculture.google. com/project) کے لیے دستاویز کرنا چاہتی تھی۔ /crafted-in-india)۔ اس جگہ کی قدیم دلکشی سے مماثلت کھانے کا سب سے غیر معمولی پھیلاؤ تھا جو ہمیں دوپہر کے کھانے کے لیے پیش کیا جاتا تھا۔ یقین کریں یا نہ کریں، ہمارے دوپہر کے کھانے میں سرخ مرچ اور ہری مرچ کی چٹنی کے ساتھ بک ویٹ یا کوٹو کے پتّے، پیازی، جنگلی لیک اور چارہدار سبزیاں شامل تھیں جسے ایما دتسے کہتے ہیں، چاول، بشمول ایک مقامی لال چاول، مچھلی کا سٹو، ابلی ہوئی پکوڑی، دال، ابلی ہوئی گوبھی۔ سبز پھلیاں، ایک مقامی ساگ اور چکن سالن۔ ان کے پاس مقامی طور پر پکی ہوئی راگی روٹیاں بھی ہوتی تھیں۔

اپنے زیادہ تر کام کے دوروں میں دستکاری پر توجہ مرکوز کرنے کے بعد، یہ تصور کرنا مشکل تھا کہ کوئی بھی کھانے کے اس طرح کے متنوع تجربات کی یادوں کو محفوظ کر سکتا ہے، لیکن جب کوئی دستکاری کرنے والے خاندانوں کی زندگیوں میں شامل ہو، تو یقین جانیے بغیر ان کے ساتھ کھانا کھاۓ لوٹنا ناممکن ہے۔کھانا، آخرکار، دوستی بھی تو ہے.

Comments

No comments yet. Why don’t you start the discussion?

Leave a Reply

Your email address will not be published.

oneating-border
Scroll to Top
  • The views expressed through this site are those of the individual authors writing in their individual capacities only and not those of the owners and/or editors of this website. All liability with respect to actions taken or not taken based on the contents of this site are hereby expressly disclaimed. The content on this posting is provided “as is”; no representations are made that the content is error-free.

    The visitor/reader/contributor of this website acknowledges and agrees that when he/she reads or posts content on this website or views content provided by others, they are doing so at their own discretion and risk, including any reliance on the accuracy or completeness of that content. The visitor/contributor further acknowledges and agrees that the views expressed by them in their content do not necessarily reflect the views of oneating.in, and we do not support or endorse any user content. The visitor/contributor acknowledges that oneating.in has no obligation to pre-screen, monitor, review, or edit any content posted by the visitor/contributor and other users of this Site.

    No content/artwork/image used in this site may be reproduced in any form without obtaining explicit prior permission from the owners of oneating.in.

  • Takshila Educational Society